گوگل نے پلے اسٹور سے 13 ایپلی کیشنز ہٹا دیں۔

0

کیلیفورنیا: ایپلی کیشنز میں موجود یہ وائرس اتنا خطرناک ہے کہ ڈیوائس میں ایپ کے انسٹال ہونے کے بعد سائبر حملہ آور صارفین کی ڈیوائس کا کنٹرول سنبھالتے ہوئے بہت سی چیزوں تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں۔ رسائی حاصل کرنے کے بعد ہیکر صارف کے علم میں آئے بغیر ڈیوائس میں اسپائی ویئر یا پیسے چرانے والے بینکنگ ٹروجن سے شامل کر سکتے ہیں۔

یہ بگ ہیکرز کو اسکرین پر موجود ایپس کو چھپانے کی صلاحیت بھی دیتا ہے جس کا مطلب ہے کہ صارف یہ نہیں دیکھ سکتا ہے فون کو سست کرنے والے ایڈویئر کو انسٹال کیا جارہا ہے۔

مکیفی کی جانب سے کل 25 ایپلی کیشنز میں اس نقصان دہ وائرس کی نشان دہی کی تصدیق کی گئی جس میں 13 گوگل کے پلے اسٹور پر دستیاب ہیں اور 3 لاکھ سے زائد افراد ان ایپس کو ڈاؤن لوڈ اور انسٹال کر چکے ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.